April 15, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/rubbernurse.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253

ایران نے بین الاقوامی عدالت انصاف میں مطالبہ کیا ہے کہ غزہ میں جاری نسل کشی روکنے کے لیے بین الاقوامی عدالت انصاف اور اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل اقدامات کرے۔ اسی طرح دوسری اقوام کی بھی ذمہ داری ہے کہ وہ فلسطینی عوام کے لیے اپنا کردار ادا کریں۔

ایران کی طرف سے یہ مطالبہ جمعرات کے روز عالمی عدالت انصاف میں فلسطین پر اسرائیلی قبضے کی سماعت کے دوران کیا ہے۔ بین لاقوامی عدالت انصاف اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی درخواست پر اس معاملے میں آج کل ہالینڈ کے شہر ‘دی ہیگ’ میں سماعت کر رہی ہے۔

سماعت چھ دن تک جاری رہے گی۔ جبکہ سماعت کے دوران 52 ممالک اور تین انسانی حقوق سے متعلق تنظیمیں بھی اپنا موقف پیش کریں گی۔

نائب وزیر خارجہ ایران برائے قانونی وبین الاقوامی امور رضا نجفی نے ایران کا موقف پیش کرتے ہوئے کہا ‘ بین الاقوامی عدالت انصاف کا غیر معمولی کردار ہے۔’ اس لیے اسے قانون کی حکمرانی اور قانون کی بالا دستی کو مضبوط کرنے کے لیے اپنا کردار موثر انداز میں ادا کرنا ہو گا۔’ تاکہ اس کے موثر کردار سے فلسطینی عوام کو امید مل سکے کہ کہ انصاف ہی غالب رہے گا۔’

واضح رہے ایران اسرائیل کو تسلیم نہیں کرتا ہے اور اسرائیل و ایران کے درمیان دشمنی کا تعلق ہے۔ رضا نجفی نے مزید کہا نے کہا’ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل بھی غزہ کی پٹی میں اسرائیلی جارحیت کی ذمہ دار ہے۔ عملاً سلامتی کونسل فلسطین کے لیے غیر فعال اور غیر مؤثر نظر آتی ہے۔ اس کی یہ غیر فعالیت ہی اسرائیل کے فلسطین پر طویل قبضے کی اہم وجوہات میں سے سب سے بڑی وجہ ہے۔’

انہوں نے مزید کہا ‘ اسرائیلی حکومت کی طرف سے تقریباً آٹھ برسوں کے دوران میں جو مظالم اور جرائم روا رکھے ہیں وہ اسی سلامتی کونسل کی اسی بے عملی کا نتیجہ ہیں ‘ایرانی نمائندے کا اپنا موقف پیش کرتے ہوئے کہانا تھا’ سلامتی کونسل کا ایک مستقل رکن کی وجہ سے پوری سلامتی کونسل عملاً مفلوج ہو کر رہ گئی ہے۔

نائب وزیر کارجہ ایران نے اپنا موقف پیش کرتے ہوئے یہ بھی کہا ‘ اسرائیل فلسطینی علاقوں میں نسل پرستی کی وجہ سے فلسطینیوں کو فوج کی مدد سے دیواروں اور چوکیوں سے پرے رہنےکے تابع رکھے ہوئے ہے۔’

انہوں نے تمام ملکوں سے مطالبہ کیا کہ وہ اکٹھے ہوکر اسرائیل کا مقابل جاندار کردار ادا کریں اور فلسطینیوں کے خلاف جاری نسل پرستی” اور نسل کشی کو روکنے میں اپنا فرض ادا کریں۔’ ان کا کہنا تھا کہ فلسطینیوں کو چھوڑ نہیں دینا چاہیے بلکہ بین الاقوامی برادری کو اپنی اخلاقی ذمہ داری پوری کرنا چاہیے۔’

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *