April 15, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/rubbernurse.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
الرئيس جو بايدن خلال أول إعلان لحملته الانتخابية

امریکی صدر جو بائیڈن نے ’سپر ٹیوزے‘ کے بعد سوئنگ ریاستوں میں اپنی پہلی 30 ملین ڈالر کی اشتہاری مہم میں اپنی عمر کے بارے میں کوئی عذر پیش نہیں کیا بلکہ کھل کر بات کی ہے۔ انہوں نے خود کو اپنے پیشرو ڈونلڈ ٹرمپ سے زیادہ موثرپیش کرنے کی کوشش کی۔

واضح رہے کہ جوبائیڈن امریکہ میں دوبارہ صدارتی دوڑ میں شامل ہونے کے لیے مہم چلا رہے ہیں مگر اس بار انہیں عوامی حلقوں کی طرف سے سب سے زیادہ اگر کسی خدشے کا سامنا ہے تو وہ ان کی عمر ہے۔

60 سیکنڈ کا اشتہار 81 سالہ بائیڈن کےبیان سےشروع ہوتا ہے جو دوسری مدت کے لیے اپنی باری کے بارے میں رائے دہندگان کے سرفہرست خدشات میں سے ایک کو حل کرتے ہوئے تسلیم کیا۔ انہوں نے کہا کہ “دیکھو میں جوان نہیں ہوں اور یہ کوئی راز نہیں ہے لیکن یہ معاہدہ ہے، میں سمجھتا ہوں کہ امریکی عوام کے لیے کام کیسے کرنا ہے”۔ بائیڈن مزید کہتے ہیں جب وہ کامیابیوں کی فہرست کو آگے بڑھاتے ہیں جس میں کوویڈ 19 وبائی امراض کے دوران ملک کی قیادت کرنا، ادویات کی قیمتوں کو کم کرنا اور معیشت کو فروغ دینا شامل ہیں۔

ٹیلی ویژن اور ڈیجیٹل پلیٹ فارمز پرچھ ہفتے کی اشتہاری مہم کو جمعرات کے اسٹیٹ آف دی یونین خطاب میں کلیدی مسائل کو اجاگر کرنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ بائیڈن کی عمر انتخابی مہم میں ایک بڑی کمزوری بن گئی ہے – اس کے باوجود کہ بہت سے ووٹرز ٹرمپ کے بارے میں بھی ایسے ہی خدشات کا اظہار کررہے ہیں جن کی عمر اس وقت 77 سال ہے۔

اپنے اسٹیٹ آف دی یونین خطاب کے دوران جمعہ کو ڈیموکریٹک صدر نے کانگریس کے دونوں ایوانوں سے کہا کہ “میں جانتا ہوں کہ شاید ایسا نہیں لگتا، لیکن میں بہت پہلے پیدا ہوا تھا۔ میری عمر کے علاوہ کچھ چیزیں پہلے سے کہیں زیادہ واضح ہو گئی ہیں”۔

ایسوسی ایٹڈ پریس اور ’این او آر سی‘ سینٹر فار پبلک افیئرز ریسرچ کے ذریعہ کرائے گئے ایک حالیہ سروے میں پتا چلا ہے کہ 63 فی صد امریکیوں کا کہنا ہے کہ وہ بائیڈن کی صدر کے طور پر مؤثر طریقے سے خدمات انجام دینے کی ذہنی صلاحیت کے بارے میں “پراعتماد نہیں ہیں” یا “بالکل بھی یقین نہیں رکھتے”۔ سروے کے نتائج سے ظاہر ہوتا ہے کہ 57 فیصد کا خیال ہے کہ ٹرمپ کے پاس بھی اس عہدے کے لیے ضروری یادداشت اور نفاست کی کمی ہے۔

دریں اثنا ٹرمپ کی حمایت کرنے والے ایک سپر پی اے سی نے بائیڈن کی عمر کو اجاگر کرتے ہوئے ایک اشتہار جاری کیا جس میں کہا گیا کہ “اگر بائیڈن جیت جاتے ہیں تو کیا وہ 2029 تک زندہ رہ سکے گا؟”

بائیڈن نے اپنے اعلان کو سامعین سے مذاق کرتے ہوئے ختم کیا کہ “دیکھو میں جوان، توانا اور خوبصورت ہوں‘‘۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *