April 23, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/rubbernurse.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253

سفارت خانے کی ویب سائٹ پر جاری تحریری بیان میں بتایا گیا کہ ’معاملہ حل ہو گیا لیکن ہم دورہ جاری نہ رکھنے کے ان کے فیصلے کا احترام کرتے ہیں۔ ہم سلطنت میں ان کے دوبارہ استقبال کے منتظر ہیں۔

The Saudi Arabian Embassy in Washington

واشنگٹن میں سعودی عرب کے سفارت خانے نے ایک ’غلط فہمی‘ کو اس واقعے کی وجہ قرار دیا ہے جس میں امریکی کمیشن برائے بین الاقوامی مذہبی آزادی (یو ایس سی آئی آر ایف) کے ایک رکن سے کیبا (یہودیوں کی روایتی ٹوپی) اتارنے کو کہا گیا تھا۔

سفارت خانے کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ’ہم ایک حالیہ واقعے کی درج ذیل وضاحت کرنا چاہتے ہیں، جس میں سعودی عرب کے دورے پر آئے ہوئے وفد کے ایک رکن – ربی ابراہم کوپر کو درعیہ گیٹ میں داخلے سے منع کیا گیا تھا، یہ افسوسناک واقعہ داخلی پروٹوکول کی غلط فہمی کا نتیجہ تھا۔‘

بیان میں کہا گیا کہ ’معاملہ اعلیٰ حکام تک پہنچایا گیا اور سفیر کو ربی سے بات کرنے کا موقع بھی ملا۔‘

سفارت خانے کی ویب سائٹ پر جاری تحریری بیان میں بتایا گیا کہ ’معاملہ حل ہو گیا لیکن ہم دورہ جاری نہ رکھنے کے ان کے فیصلے کا احترام کرتے ہیں۔ ہم سلطنت میں ان کے دوبارہ استقبال کے منتظر ہیں۔‘

فرانسیسی خبررساں ادارے اے ایف پی کے مطابق امریکی کمیشن برائے بین الاقوامی مذہبی آزادی (یو ایس سی آئی آر ایف) نے گذشتہ روز کہا تھا کہ ان کا وفد ریاض کے قریب یونیسکو کے عالمی ثقافتی ورثے میں شامل تاریخی قصبے درعیہ کا دورہ کر رہا تھا جب کمیشن کے سربراہ کٹر ربی ابراہم کوپر نے ’ان کی جانب سے کی گئی سر سے ٹوپی اتارنے کی درخواستیں مسترد کر دیں۔‘

کوپر نے ایک بیان میں کہا کہ ’کسی کو بھی ثقافتی ورثے تک رسائی سے منع نہیں کیا جانا چاہیے، بالخصوص اس کو جس کا مقصد اتحاد اور بہتری کو اجاگر کرنا ہے، صرف اس وجہ سے کہ کسی شخص کی شناخت یہودی کے طور پر ہوتی ہے۔‘

یو ایس سی آئی آر ایف کا کہنا ہے کہ کوپر اور ان کے نائب صدر ریورنڈ فریڈرک ڈیوی کو گذشتہ منگل کو ان کے سرکاری دورے کے حصے کے طور پر سائٹ کا دورہ کرنے کی دعوت دی گئی تھی۔

تعبیری امیج

تعبیری امیج

دورے میں کئی تاخیروں کے بعد، حکام نے درخواست کی تھی کہ کوپر ’سائٹ پر رہتے ہوئے اور جب بھی وہ عوام کے سامنے موجود ہوں، اپنی کیبا ہٹا دیں، حالانکہ سعودی وزارت خارجہ نے سائٹ کے دورے کی منظوری دے دی تھی۔‘

کوپر نے کہا کہ سعودی عرب میں ’اپنے 2030 وژن کے تحت حوصلہ افزا تبدیلیاں آ رہی ہیں۔ تاہم، خاص طور پر اس وقت جب یہود دشمنی میں اضافہ ہو رہا ہے، مجھے اپنی کیبا اتارنے کو کہا گیا، جس کی وجہ سے ہمارے لیے یو ایس سی آئی آر ایف کی جانب سے اپنا دورہ جاری رکھنا ناممکن ہو گیا۔‘

یو ایس سی آئی آر ایف نے کہا کہ یہ بالخصوص افسوس ناک ہے کہ ’مذہبی آزادی کو فروغ دینے والی ایک امریکی سرکاری ایجنسی‘ کے نمائندے کے ساتھ ایسا ہوا۔

اس واقعے کے بعد وفد نے سعودی عرب کا اپنا دورہ مختصر کر دیا تھا۔

ربی ابراہام کوپر فائل فوٹو

ربی ابراہام کوپر فائل فوٹو

یہ کمیشن امریکی حکومت کا ایک مشاورتی ادارہ ہے جسے امریکی کانگریس کا مینڈیٹ حاصل ہے۔

یو ایس سی آئی آر ایف کے وائس چیئرمین ڈیوی نے اس واقعے کو ’حیرت انگیز اور تکلیف دہ‘ قرار دیتے ہوئے کہا کہ ’یہ نہ صرف حکومت کے تبدیلی کے سرکاری بیانیے کے برعکس ہے بلکہ مملکت میں زیادہ سے زیادہ مذہبی آزادی کے حقیقی اشارے بھی ہیں جن کا ہم نے براہ راست مشاہدہ کیا۔‘

یہ واقعہ ایسے وقت میں پیش آیا جب غزہ کی جنگ پر سعودی عرب اور امریکی اتحادی اسرائیل کے درمیان کشیدگی ہے اور تنازع ختم ہونے کے بعد دونوں ریاستوں کے درمیان تعلقات کو معمول پر لانے کے لیے امریکی کوششیں جاری ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *