April 23, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/rubbernurse.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
iranair

امریکہ کے اہم ذمہ دار نے خبر دار کیا ہے کہ G7 کی اقوام اس امر کے لیے تیار ہیں کہ اگر ایران روس کو میزائل فراہم کرے گا تو اس کی ائیر لائن ‘ایران ائیر’ کی یورپ کے ملکوں میں امدو رفت روکی جا سکتی ہے۔

واضح رہے روس کے یوکرین پر حملے سے ایران روس کو میزائل اور ڈرون فراہم کرنے والے ملک کے طور پر سامنے آیا ہے۔

اب جبکہ روس کی یوکرین میں جنگ کے دو سال مکمل ہو چکے ہیں مگر جنگ ابھی جاری ہے اور امریکہ دیکھ رہا ہے کہ ایران روس کو مزید میزائل دینے جا رہا ہے۔ امریکہ اور یورپی اتحادیوں نے روس کو میزائلوں کی ممکنہ فراہمی رونے کا عندیہ دیا ہے۔

دوسری جانب اسی نوعیت کے مطالبات آج کر مغربی ملکوں کے عوام اپنی حکومت سے کر رہے ہیں کہ غزہ میں 31 ہزار سے زائد ہلاکتیں ہو چکی ہیں کم از کم اب اسرائیل کو اسلحہ فراہم نہ کیا جائے۔ کئی مغربی ملکوں مین انسانی حقوق کی تنظیموں نے بھی آواز اٹھائی اور کئی عدالتوں سے رجوع کر نے کا عندیہ دیا ہے۔

تاہم امریکی ذمہ دار نے ایران کے بارے میں انتباہ کیا ہے ‘ہمارا یہ پیغام بڑا واضح ہے کہ ایران نے روس کو بیلسٹک میزائلوں کی فراہمی جاری رکھی تو اس کا رد عمل تیز اور شدید ہو گا۔’ روس نے یوکرین میں زمین سے زمین پر مار کرنے والے اور زمین سے فضا میں مار کرنے والے میزائل استعمال کیے ہیں۔

تاہم امریکی ذمہ دار نے یہ نہیں بتایا کہ یہ بیلسٹک میزائل ایران نے روس کو منتقل کر دیے ہیں یا ابھی کیے جانے ہیں۔ جبکہ روس کی طرف سے رپورٹ کیا گیا ہے کہ ماسکو اور تہران اس سلسلے میں باہمی رابطے میں ہیں۔

واضح رہے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی ایران کے خلاف بعض پابندیاں اکتوبر 2023 میں ختم ہو گئی ہیں۔ تاہم ایرنی بیلسٹک میزائلوں کے خلاف پابندیاں موجود ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *